فلسطین کی آزادی کے لیے متحرک صامدون نیٹ ورک نے ایک کھلا خط جاری کیا ہے۔ آئی ایم ٹی کی جانب سے لکھے گئے اس خط کے درج ذیل جواب میں فلسطین کی تحریکِ آزادی کی مکمل حمایت کرتے ہوئے جدوجہد کے درست طریقہ کار کی نشاندہی کی گئی ہے۔ اپنے اس خط میں صامدون نیٹ ورک نے تحریک آزادی کے کارکنان سے اپیل کی ہے اور کہا ہے کہ ”فلسطینی قیادت کے جانے کا وقت آ گیا ہے!“۔ یہ خط بھی آئی ایم ٹی کے جواب کے بعد نیچے شائع کیا جا رہا ہے۔

نجی شعبے کی منافع خوری، بے دریغ پیداواری طور طریقے، ماحولیات کی تباہی اور طبی تحقیق میں کم تر سرمایہ کاری نے ایک ایسا طوفان برپا کر دیا ہے جس میں عالمی وبائیں عام ہوتی جا رہی ہیں اور ان کی روک تھام کے لیے ہماری صلاحیت معدوم ہوتی جا رہی ہے۔ سرمایہ داری نے نہ صرف اس ان دیکھے اور قاتل دشمن کو جنم دیا ہے بلکہ اس کے خلاف جدوجہد میں یہ سب سے بڑی رکاوٹ بن چکا ہے۔

برنی سینڈر دوڑ سے باہر ہو چکا ہے۔ یہ ان لاکھوں لوگوں کے لیے دھچکا ہے جنہیں امید تھی کہ اس کی کیمپئین امریکہ پر حکمرانی کرنے والے ارب پتیوں کے خلاف لڑنے کے لیے ایک آگے کا راستہ فراہم کرے گی۔ لیکن یہ ایک اہم موڑ بھی ہے۔ یہ لاکھوں لوگوں کے لیے ایک آخری تنکا ثابت ہوگا۔ یہ آخری بار ہوگا کہ انہوں نے سرمایہ داروں کے بنائے ہوئے دو پارٹی نظام کے اندر رہتے ہوئے کام کرنا چاہا۔